iqbal

اقبال کی ایک فارسی نظم جس کو پڑھ کر احساس ہوتا ہے کہ میں “انسان” اس کائنات کی ناقابل شکست نوع ہوں۔ (احمد جارید صاحب کے ترجمہ کے ساتھ)

میلادِ آدم

نعرہ زَد عِشق کہ خُونیں جِگَرے پیدا شُد
حُسن لرزید کہ صاحب نظَرے پیدا شُد

فطرت آشُفت کہ از خاکِ جہانِ مجبور
خودگَرے خود شِکَنے خود نِگَرے پیدا شُد

خبَرے رَفت ز گَردُوں بہ شبستانِ ازَل
حذَر اے پردگیاں پردہ درے پیدا شُد

آرزو بے خبر از خِویش بہ آغوشِ حیات
چشم وا کَرد و جہانِ دِگَرے پیدا شُد

زندگی گُفت کہ در خاک تپیدَم ہمہ عُمر
تا ازِ ین گنبدِ دیرینہ دَرے پیدا شُد

(اقبال)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عشق نے نعرہ لگایا کہ جگر کو خون کرنے والا عاشق پیدا ہوگیا
حسن لرز اٹھا کہ ایک صاحب نظر آگیا

فطرت گھبرائی کہ جبر کی ماری دنیا کی خاک سے
خود کو بنانے خود کو توڑنے خود کو جاننے والا پیدا ہوگیا

آسمان سے ازل کی خلوت گاہ میں خبر گئی
اے پردہ نشینو! ہوشیار، پردہ اٹھانے والا آگیا

آرزو زندگی کی آغوش میں اپنی سدھ بدھ بھولی ہوئی تھی
اس نے آنکھ کھولی اور ایک اور ہی جہان پیدا ہوگیا

زندگی بولی کہ میں تمام عمر خاک میں تڑپی
تب کہیں اس پرانے گنبد سے ایک دروازہ نکلا

اپنا تبصرہ بھیجیں